بند کریں
شاعری منصور آفاقیاد کچھ بھی نہیں‌ کہ کیا کچھ تھا

(13) ووٹ وصول ہوئے