بند کریں
شاعری منصور آفاق

یاد کچھ بھی نہیں‌ کہ کیا کچھ تھا

-

Yaad kuch bhi nehin k kia kuch tha


(13) ووٹ وصول ہوئے