بند کریں
شاعری قائم نقوی

بھید مجھ پر بھی کب کھلا میرا

-

bheed mujh per bhi kaab khula mera


(102) ووٹ وصول ہوئے