بند کریں
شاعری قتیل شفائی

جب بھی چاہیں اک نئی صورت بنا لیتے ہیں لوگ

-

jab bhi chahen , ik nayi surat bana lete hain log


(358) ووٹ وصول ہوئے