بند کریں
شاعری رضوان بابر

سوچتا کیا ہے لب کُشائی کر

-

sochta kia hai lab kushaee kar


(22) ووٹ وصول ہوئے