بند کریں
شاعری شکیل بدیوانی

سر بھی ہے پائے

-

Sar bhi hai paye


(346) ووٹ وصول ہوئے