بند کریں
شاعری ولی دکنی

طالب نہیں مہر و مشتری کا

-

talib nahi


(173) ووٹ وصول ہوئے