بند کریں
شاعری ضیا المصطفی تُرک مہروی

وجہِ آزار ہی نہ ہو جائے

-

wajah e azaar hi na ho jaye


(45) ووٹ وصول ہوئے