Para Hai Kuch Aisa Riwaj Aaine Ka

پڑا ہے کچھ ایسا رواج آئینے کا

پڑا ہے کچھ ایسا رواج آئینے کا

کہ ہے ہر طرف اب تو راج آئینے کا

وہ رات آئے ہیں خواب میں اس کے شاید

چمکتا ہے چہرہ جو آج آئینے کا۔۔!

سزا اس کو دیتے ہیں سچ بولنے کی

بتاتے ہیں پتھر علاج آئینے کا

نہیں دور کرتے کدورت دلوں کی

سمجھتے نہیں کیوں مزاج آئینے کا

ہے اعزاز حاصل یہی آئینے کو

کہ ہے آج دشمن سماج آئینے کا

خالد اعزاز

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1269) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Khalid Azaz, Para Hai Kuch Aisa Riwaj Aaine Ka in Urdu. This famous Urdu Shayari is a , and the type of this Nazam is Urdu Poetry. Also there are 25 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Khalid Azaz.