Dastaras Main Kehkeshaan Jugnu Diya Kuch Bhi Nahi

دسترس میں کہکشاں جگنو دیا کچھ بھی نہیں

دسترس میں کہکشاں جگنو دیا کچھ بھی نہیں

شکر ہے پھر بھی مرے مولیٰ گلہ کچھ بھی نہیں

کون ہے مقتول قاتل کون سب خاموش ہیں

بے حسی ہے ورنہ آنکھوں سے چھپا کچھ بھی نہیں

اس دل بیتاب کو تسکین آخر کون دے

اس کی قسمت میں تحمل کے سوا کچھ بھی نہیں

روز و شب کے ان گنت اوراق پلٹے ہیں مگر

زندگی کی کیا حقیقت ہے پتا کچھ بھی نہیں

تیری قدرت میں ہے سارے مسئلوں کا حل نہاں

تیرے آگے میرے مولیٰ مسئلہ کچھ بھی نہیں

کیا یہ کم ہے امتی ہوں میں ترے محبوب کا

کیسے کہہ دوں اے خدا مجھ کو ملا کچھ بھی نہیں

منصفوں کے فیصلے اس دور میں ہیں بے مثال

اس کو دیتے ہیں سزا جس کی خطا کچھ بھی نہیں

بے وفا کو کیا سناتا میں وفا کی داستاں

میں نے اس کو آخری خط میں لکھا کچھ بھی نہیں

میں کسی کو کیوں سناؤں اپنی روداد حیات

تو مرا مقصودؔ تجھ سے تو چھپا کچھ بھی نہیں

مقصور انور مقصود

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(399) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Maqsood Anwar Maqsood, Dastaras Main Kehkeshaan Jugnu Diya Kuch Bhi Nahi in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 17 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Maqsood Anwar Maqsood.