Ee Zindagi

اے زندگی

اے زندگی

تو اب تمہاری عمر کی بہاریں گزر گئیں

اور خزاں کا موسم آنے والا ہے

اچھا تو یہ بتا زندگی

کہ چاند کی پریاں اب تک

میرے آنگن میں روزانہ

کیوں اترتی ہیں

کیوں مجھے آسمانوں کی سیر کراتی ہیں

میں اب تک رنگوں سے کیوں کھیلتی ہوں

مجھے کائنات سے پرے

ایک دنیا کیوں دکھائی دیتی ہے

جہاں صرف پھول ہی پھول ہوتے ہیں

اور میٹھے پانی کے آبشاروں میں

میرا وجود بھیگتا ہے

میں اوک بھر کر ان سے

پانی کیوں پیتی ہوں اب تک

مجھے پرندوں کی بولی کیوں سمجھ میں آتی ہے

مجھے شرارت کرنا کیوں بھاتا ہے اب تک

میں ہنسنا کیوں نہیں بھولی ہوں

میرے اندر کی بچی کیوں اب تک

اپنے ٹوٹے ہوئے کھلونوں سے کھیلتی ہے

میرے حسین خواب کیوں نہیں چھوٹے اب تک

زندگی اے زندگی

مجھے یہ بتا

کہ میں نے اب تک نفرت کرنا کیوں نہیں سیکھا

مریم تسلیم کیانی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1246) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Maryam Tasleem Kiyani, Ee Zindagi in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 12 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.7 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Maryam Tasleem Kiyani.