بند کریں
شاعری شکیل بدیوانیدیوان بدایوانی

یہ کیا ستم ظریفی فطرت ہے آج کل

-

yeh kia sittam


(331) ووٹ وصول ہوئے