Jao Ab Rotay Raho

جاؤ اب روتے رہو

تم نہیں جانتے

اس دھند کا قصہ کیا ہے

دھند جس میں کئی زنجیریں ہیں

ایک زنجیر

کسی پھول کسی شبد

کسی طائر کی

ایک زنجیر کسی رنگ کسی برق

کسی پانی کی

زلف و رخسار

لب و چشم کی پیشانی کی

تم نہیں جانتے

اس دھند کا زنجیروں سے رشتہ کیا ہے

یہ فسوں کار تماشا کیا ہے!

تم نے بس دھند کے اس پار سے

تیروں کے نشانے باندھے

اور ادھر میں نے تمہارے لیے

جھنکار میں دل رکھ دیا

کڑیوں میں زمانے باندھے

جاؤ اب روتے رہو

وقت کے محبس میں

خود اپنے ہی گلے سے لگ کر

تم مرے سینۂ صد رنگ کے

حق دار نہیں

اب تمہارے مرے مابین

کسی دید کا

نادید کا اسرار نہیں!!

رفیق سندیلوی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(361) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Rafiq Sandeelvi, Jao Ab Rotay Raho in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 36 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 5 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Rafiq Sandeelvi.