Jitna Zmanay Main Hun Badnam Utna Bura Bhi Nahi

جتنا زمانے میں ہوں بدنام اتنا برا بھی نہیں

تیرا خیال میری نظر سے گزار بھی نہیں

دو گھڑی کی بات تھی پاس ٹھہرا بھی نہیں

سزائے موت کا حکم جاری بھی کر دیا حاکم

کوئی معاملہ تری عدالت میں دھرا بھی نہیں

اور مے پلانے کی بات کرتے ہو مارو گے کیا

پہلا نشہ چشمِ یار کا ابھی اترا بھی نہیں

بخش کر کل عالم کی سلطنیں کہا بشر سے

خالق تو ہوں میں مگر جو ترا نہیں مرا بھی نہیں

گردشِ دوراں میں اک بار زیر تو ہوئے ہیں

جتنا زمانے میں ہوں بدنام اتنا برا بھی نہیں

یہ بھی کچھ کم ستم نہیں کہ فراقِ یار میں

ہچکییں بھی لے رہے ہیں کوئی آنسو گرا بھی نہیں

آج مزاجِ یار برہم ہے انہیں نظر نہ آئیو تم

خالی ہی نہ پلٹ جائے جو کاسہ بھرا بھی نہیں

عجب ہی حالت رہی ہماری ساری عمر جہاں

جیا بھی نہیں گیا مجھ سے اور مرا بھی نہیں

جہانزیب کُنجاہی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1484) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Poetry of Jahanzeb Kunjahi, Jitna Zmanay Main Hun Badnam Utna Bura Bhi Nahi in Urdu. Also there are 4 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Jahanzeb Kunjahi.