بند کریں
شاعری افضال نوید

معلوم نہیں کون تھا کیا کرتا رہا کچھ

-

maloom nahi kon tha kiya karta raha kuch


(177) ووٹ وصول ہوئے