بند کریں
شاعری احمد کامرانکوئی منصب ، کوئی دستار نہیں چاہپیے ہے

(24) ووٹ وصول ہوئے