بند کریں
شاعری ناصر کاظمی

خیال ترک تمنا

-

Khayal tark e tammana


(230) ووٹ وصول ہوئے