بند کریں
شاعری قائم نقویتو وہی ہم بھی وہی قصہ پرانا ہو گیا

(189) ووٹ وصول ہوئے