بند کریں
شاعری رانا سعید دوشی

وہ اندر سے مقفل ہو گیا ہے

-

wo andar se muqafal ho giya hai


(256) ووٹ وصول ہوئے