تحریک انصاف کا سفر جدوجہد

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) انصاف کے لئے ایک سیاسی تحریک کی بنیاد پر قائم ہوئی ،زمان پارک لاہور میں 25 اپریل 1996 کو ورلڈ کپ کے فاتح، فلسفہ پرست اور سماجی کارکن پاکستانی کرکٹر عمران خان نے رکھی۔

رعنا کنول جمعہ مئی

Tehreek e Insaaf Ka Safr e Jidojehed
پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) انصاف کے لئے ایک سیاسی تحریک کی بنیاد پر قائم ہوئی ،زممان پارک لاہور میں 25 اپریل 1996 کو ورلڈ کپ کے فاتح، فلسفہ پرست اور سماجی کارکن پاکستانی کرکٹر عمران خان نے رکھی۔
تہذیب شدہ دنیا اور جمہوری معاشرے میں ہر جگہ سیاسی جماعتیں ہوتی ہیں جو شہریوں اور حکومت کے درمیان فرق کو بھرتے ہیں۔ سیاسی جماعتیں اپنے حقوق کے بارے میں شہریوں میں بیداری پیدا کرنے اور ان کی تعلیم و ضوابط کو کس طرح حاصل کرنے کے بارے میں تعلیم دینے میں اہم اور فیصلہ کن کردار ادا کر رہے ہیں۔
١٩٤٧ سے لے کر ہی سیاسی جماتوں کے نظام کو قائم کرنے میں ناکام رہے ہیں۔ 1947 کے آزاد ایکٹ نے نئے پیدا ہوئے پاکستان میں سیاسی اور جمہوری ثقافت کو فروغ دینے کے لئے اجتماعی اسمبلیوں کو طاقت دی.لیکن بدقسمتی سے، خانہ پرستی کی وجہ سے، نوابوں اور فدویوں کی ثقافت یہ پاکستان میں سیاسی اور جمہوری ثقافت کو فروغ دینے میں ناکام رہی  اس کے نتیجے میں سیاسی جماعتیں بہت کمزور رہیں کیونکہ نتیجے میں جمہوری ثقافت کو مکمل طور پر تیار نہیں کیا گیا.

اس نے ریاستی معاملات کو چلانے کے لئے فوجی جرنلوں کے مواقع فراہم کیے ہیں، اس وقت پاکستان کا اتنا بڑا حصہ فوجی آمریت کے تحت رہے.
اس طرح پی ٹی آئی نے انصاف کے لئے ایک تحریک کے طور پر کام شروع کیا اور پاکستان میں صحت، تعلیم، شہری، فلاح و بہبود اور اظہار کی آزادی، روزگار، مذہبی قابلیت، بین الہام ہم آہنگی اور متوازن ٹیکس کے نظام میں ریاست کی ذمہ داریوں کے بارے میں شعور پیدا کرنے کا آغاز کیا.

یہ پاکستان میں سماجی اور سیاسی ترقی پر متمرکز ہے. تحریک انصاف پاکستان میں قابل اعتماد جمہوریت، حکومت میں شفافیت اور قیادت کی احتساب کے ذریعے سیاسی استحکام پر عزم ہے.
پی ٹی آئی کا کہنا ہے کہ فیڈریشن اور صوبوں کے فعال خود مختاری میں اس کا بنیادی مقصد فلاحی ریاست قائم کرنا ہے جہاں لوگوں کو سیاسی آزادی، اقتصادی مواقع اور سماجی انصاف ہونا چاہئے.

ملک میں سماجی اور اقتصادی انصاف پر پی ٹی آئی عقائد جہاں ہر شہری ہر انسانی ضروریات اور حقوق تک رسائی رکھتا ہے. تحریک انصاف صرف واحد سیاسی جماعت ہے جو اسٹیبلشمنٹ کے خلاف ہے. پاکستان میں ہر سیاسی جماعت کو اسٹیبلشمنٹ کے ساتھ ہاتھ ملاتے ہوئے اقتدار میں آنا پڑا ، اور اس طرح ملک میں تبدیلی لانا ایک مشکل عمل ہے. پی ٹی آئی کی قیادت کو اپنے سادہ اور ترقی پسند نظریات اور عوام کی حمایت اور طاقت پر یقین ہے.

یہ نئے پاکستان کیلئے اپنی جدوجہد جاری رکھے گی.
پی ٹی آئی نے 1996 میں ابھرتے ہوئے عمران خان کی قیادت میں 6 ارکان کے مرکزی ایگزیکٹو کمیٹی کے ساتھ کام شروع کیا. پی ٹی آئی نے 1997 ء میں عام انتخابات میں حصہ لینے والے نئے انتخابات کے طور پر حصہ لیا، اگرچہ پی ٹی آئی عام انتخابات میں ایک نشست جیتنے میں ناکام رہی لیکن لیکن پی ٹی آئی نے یہ ثابت کیا کے وہ مستقبل میں باقی جماعتوں کے لئے خطرہ ہیں۔

(جاری ہے)

٢٠٠٢ کے عام انتخابات میں پی ٹی آئی کو دو نشستوں پر کامیابی ہوئی ایک میانوالی سے عمران خان کی نشت اور دوسری نصیر گل کی اسمبلی میں ایک نشست حاصل کی.

تحریک انصاف نے 18 فروری 2008 ء کے عام انتخابات کا بائیکاٹ کیا.
30 اکتوبر 2011 لاہور جلسے میں لاکھوں افراد جمع ہوئے تھے. تحریک انصاف نے ملک بھر میں تیز مقبولیت حاصل کی. 2013 میں عام انتخابات میں تحریک انصاف نے تیسری مرتبہ حصہ لیا اور ملک میں تیسری بڑی سیاسی طاقت کی حیثیت سے سامنے آئے. خیبر پختونخواہ کی صوبائی اسمبلی میں پرویز خٹک کی قیادت کے تحت وزیراعلی خیبر پختونخواہ کی حیثیت سے اتحادی حکومت قائم کی.

پشاور میں 24 نومبر، 2013 سے 26 فروری 2014 کو نیٹو سپلائی اور ڈرون حملوں کے خلاف تحریک انصاف کے پہلے ڈھانچہ کا مشاہدہ کیا گیا. 2013 ء میں تحریک انصاف نے انتخابی الیکشن کمیشن آف پاکستان  سے بھر پور مطالبہ کیا کے چاروں حلقوں این اے 57، NA 110، NA122 اور NA 125 میں آزاد، منصفانہ اور شفاف تحقیقات کی جائیں۔ عمران خان نے پاکستان کے قومی اسمبلی کے 25 حلقوں کے دوبارہ گنتی کرنے کے لئے کہا.

پی ٹی آئی ریسرچ ونگ نے 2100 صفحات کا ایک کتابچہ تیار کیا ہے کہ یہ ثابت کرنے کے لئے کہ 2013 ء کے انتخابات میں دھاندلی ہوئی تھی. پی ٹی آئی نے انتخابات کے خاتمے کیلئے پاکستان کے انتخابی کمیشن پر توجہ دینے کے لئے تمام قابل رسائی ذرائع کا استعمال کیا. عمران خان نے استدلال کیا کہ سپریم کورٹ ملک کے معزول عدلیہ کو نتیجہ کا نوٹس لے جانا چاہئے.

تمام قانونی فورم کی جانب سے مایوس ہونے کے بعد تحریک انصاف پاکستان نے 22 اپریل 2014 کو سرکاری طور پر مستحکم انتخابات کے خلاف اپنی تحریک شروع کرنے کے لئے اعلان کیا. پنجاب اور اسلام آباد کے تمام شہروں میں احتجاجی ریلیاں منعقد کی گئیں. بعد ازاں تحریک انصاف نے 14 اگست 2014 کو اسلام آباد میں دھرنے کا اعلان کیا.
تحریک انصاف کی مقبولیت آج تک بڑھتی ہوئی ہے.

پی ٹی آئی کی مقبولیت کا اہم نقطہ نظر پی ٹی آئی نے عوامی گفتگو پر فساد، سیاست کی نوعیت، سیاسی جماعتوں میں جمہوری معیار، سیاسی سرگرمیوں میں نوجوان شمولیت اور سوشل میڈیا  کےکردار کی اپیل کی ہے.
18 ترمیم میں سیاسی جماعتوں نے اسلامی جمہوریہ پاکستان کے آئین سے انٹرا پارٹی کے انتخابات کے ایک ذیلی شق کو ہٹا دیا. جیسا کہ یہ سیاسی جماعتیں گھاس کی جڑ کی سطح پر کارکنوں کی نئی قیادت اور بااختیار بنانے کے لئے دلچسپی نہیں تھی.

اس کے برعکس پی ٹی آئی نے سینٹرل میں مقبول انتخابات سے متعلق ووٹ پر انتباہ پارٹی انتخابات کیے. اس کے نتیجے میں، امید ہے کہ انٹرا پارٹی کے انتخابات میں پی ٹی آئی فائلوں میں صفوں میں نئی طاقتور اور نظریاتی قیادت ہوگی. پی ٹی آئی ایجنڈا اور نظریات کو فروغ دینے میں نوجوانوں نے ایک اہم کردار ادا کیا.
پچھلے سال 2018 کا عام انتخابات، پی ٹی آئی نے قومی اسمبلی میں اور بڑے پیمانے پر خیبرپختونخواہ اور پنجاب اسمبلی میں کامیابی حاصل کی.

تحریک انصاف کے بانی عمران خان نے ٢٢ وزیر اعظم کی حثیت سے حلف لے کر اسلامی جمہریہ پاکستان میں اپنی حکومت قائم کی. خیبر پختونخواہ اسمبلی میں پی ٹی آئی نے غالب پوزیشن حاصل کی اور اپنی صوبائی حکومت محمود خان کے تحت خیبر پختونخواہ کے وزیر اعلی کے تحت قائم کی، جبکہ پنجاب اور بلوچستان میں تحریک انصاف نے اپنی اتحادی حکومتوں کو تشکیل دیا.

٢٠١٨ کے الیکشن میں تحریک انصاف سب سے بڑی پارٹی کے طور پر 16.8 ملین ووٹ لے کر سامنے اآئی۔
تحریک انصاف پاکستان نے ایک انسٹی ٹیوٹ میں تحریک انصاف کو تبدیل کرنے کے لئے انقلابی پروگرام پر کام کرتے ہوئے عمران خان کی کرشمیت کی قیادت میں کام کیا اور اس حوالے سے پارٹی کا دوسرا آئین 1 مئی 2019 کو اعلان کیا جائے گا جس کا مقصد عوام کے دماغ اور دل پر قبضہ کرنا ہے.

پارٹی کا یہ نیا آئین نہ صرف تحریک انصاف کے اندر انقلاب لائے گی بلکہ دیگر سیاسی جماعتوں میں بھی اور امید ہے کہ پاکستانی سیاسی جماعتوں کی سیاسی ثقافت تبدیل ہوجائے گی. پی ٹی آئی نوجوانوں اور عمران خان کے جدوجہد کی وجہ سے صرف ایک ہی جمہوری معیار اور جمہوریت کے معیار پر مبنی سیاسی نظام سے منتقلی میں کردار ادا کرسکتے ہیں.

متعلقہ مضامین :

Your Thoughts and Comments

Tehreek e Insaaf Ka Safr e Jidojehed is a Special Articles article, and listed in the articles section of the site. It was published on 03 May 2019 and is famous in Special Articles category. Stay up to date with latest issues and happenings around the world with UrduPoint articles.