Jab Se Alfaz K Jangal Main Ghira Hai Koi

جب سے الفاظ کے جنگل میں گھرا ہے کوئی

جب سے الفاظ کے جنگل میں گھرا ہے کوئی

پوچھتا پھرتا ہے میری بھی صدا ہے کوئی

راہ کی دھول میں ڈوبا ہوا آ پہنچے گا

اپنے ماضی کا پتہ لینے گیا ہے کوئی

رات کے سائے میں اک اجڑے ہوئے آنگن میں

بے صدا ٹھونٹھ کے مانند کھڑا ہے کوئی

جب بھی گھبرا کے تجھے دیتا ہوں اک آدھ صدا

لوگ کہتے ہیں کہ اس گھر میں بلا ہے کوئی

میں وہ چٹھی ہوں مٹا جاتا ہے جس کا ہر حرف

پڑھ کے اک بار مجھے بھول گیا ہے کوئی

آسماں رات درختوں کے قریب آیا تھا

پوچھتا پھرتا تھا کیا ان میں چھپا ہے کوئی

تم یوں ہی وقت گنوانے پہ تلے ہو عابدؔ

کبھی پانی پہ بھلا نقش بنا ہے کوئی

عابد عالمی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(716) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Abid Almi, Jab Se Alfaz K Jangal Main Ghira Hai Koi in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 11 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.7 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Abid Almi.