Aag Ki Piyas

آگ کی پیاس

میں آگ بھی تھا اور پیاسا بھی

تو موم تھی اور گنگا جل بھی

میں لپٹ لپٹ کر

بھڑک بھڑک کر

پیاس بجھاتی آنکھوں میں بجھ جاتا تھا

وہ آنکھیں سپنے والی سی

سپنا جس میں اک بستی تھی

بستی کا چھوٹا سا پل تھا

سوئے سوئے دریا کے سنگ

پیڑوں کا میلوں سایہ تھا

پل کے نیچے اکثر گھنٹوں

اک چاند پگھلتے دیکھا تھا

اب یاد میں پگھلی آگ بھی ہے

آنکھوں میں بہتا پانی بھی

میں آگ بھی تھا اور پیاسا بھی

ابرارالحسن

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(706) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Abrarul Hasan, Aag Ki Piyas in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 23 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Abrarul Hasan.