Kal Apne Sheher Ki Bas Main Sawar Hote Hue

کل اپنے شہر کی بس میں سوار ہوتے ہوئے

کل اپنے شہر کی بس میں سوار ہوتے ہوئے

وہ دیکھتا تھا مجھے اشک بار ہوتے ہوئے

پرندے آئے تو گنبد پہ بیٹھ جائیں گے

نہیں شجر کی ضرورت مزار ہوتے ہوئے

ہے ایک اور بھی صورت رضا و کفر کے بیچ

کہ شک بھی دل میں رہے اعتبار ہوتے ہوئے

مرے وجود سے دھاگا نکل گیا ہے دوست

میں بے شمار ہوا ہوں شمار ہوتے ہوئے

ڈبو رہا ہے مجھے ڈوبنے کا خوف اب تک

بھنور کے بیچ ہوں دریا کے پار ہوتے ہوئے

وہ قید خانہ غنیمت تھا مجھ سے بے گھر کو

یہ ذہن ہی میں نہ آیا فرار ہوتے ہوئے

افضل خان

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(754) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Afzal Khan, Kal Apne Sheher Ki Bas Main Sawar Hote Hue in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 47 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Afzal Khan.