Tanhaiyon Ke Dasht Main Aksar Mila Mujhe

تنہائیوں کے دشت میں اکثر ملا مجھے

تنہائیوں کے دشت میں اکثر ملا مجھے

وہ شخص جس نے کر دیا مجھ سے جدا مجھے

وارفتگی مری ہے کہ ہے انتہائے شوق

اس کی گلی کو لے گیا ہر راستہ مجھے

جیسے ہو کوئی چہرہ نیا اس کے روبرو

یوں دیکھتا رہا مرا ہر آشنا مجھے

حرف غلط سمجھ کے جو مجھ کو مٹا گیا

اس جیسا اس کے بعد نہ کوئی لگا مجھے

پہلے ہی مجھ پہ کم نہیں تیری عنایتیں

دم لینے دے اے گردش دوراں ذرا مجھے

مشکل مجھے ڈوبنا کنارے پہ بھی نہ تھا

ناحق بھنور میں لایا مرا ناخدا مجھے

یہ زندگی کہ موت بھی ہے جس پہ نوحہ خواں

کس جرم کی نہ جانے ملی ہے سزا مجھے

احمد راہی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(605) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ahmed Rahi, Tanhaiyon Ke Dasht Main Aksar Mila Mujhe in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 43 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.8 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ahmed Rahi.