Ab Dhoop Moqaddar Hoi Chhappar Na Milay Ga

اب دھوپ مقدر ہوئی چھپر نہ ملے گا

اب دھوپ مقدر ہوئی چھپر نہ ملے گا

ہم خانہ بدوشوں کو کہیں گھر نہ ملے گا

آوارہ تمناؤں کو گر سمت نہ دو گے

بھٹکی ہوئی امت کو پیمبر نہ ملے گا

سورج ہی نظر آئے گا نیزے پہ ہمیشہ

سچائی کے شانوں پہ کبھی سر نہ ملے گا

الفاظ مسائل کے شراروں سے بھرے ہیں

غزلوں میں مری حسن کا پیکر نہ ملے گا

ہارو گے جو ہمت تو ڈبو دے گا سمندر

ساحل تمہیں کشتی سے اتر کر نہ ملے گا

اس باغ میں کھلتے ہیں ابھی جھلسے ہوئے پھول

اس باغ میں خوشبو کو ابھی گھر نہ ملے گا

یہ سوچ کے آیا ہے ترے شہر میں انجمؔ

آئینوں کے اس شہر میں پتھر نہ ملے گا

فاروق انجم

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1110) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Farooq Anjum, Ab Dhoop Moqaddar Hoi Chhappar Na Milay Ga in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 13 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Farooq Anjum.