Jaise Koi Ziddi Bacha Kab Behle Behlane Se

جیسے کوئی ضدی بچہ کب بہلے بہلانے سے

جیسے کوئی ضدی بچہ کب بہلے بہلانے سے

ایسے ہم دنیا سے چھپ کر دیکھیں خواب سہانے سے

سب کچھ سمجھے لیکن اتنی بات نہیں پہچانے لوگ

مل جاتا ہے چین کسی کو ایک تمہارے آنے سے

ہم تو غم کی ایک اک شدت باہر آنے سے روکیں

اس کی آنکھیں باز نہ آئیں انگارے برسانے سے

لوگو! ہم پردیسی ہو کر جانے کیا کیا کھو بیٹھے

اپنے کوچے بھی لگتے ہیں بیگانے بیگانے سے

دیکھو دوست! تمہارا مقصد شاید ہمدردی ہی ہو

میرا پیکر ٹوٹ گرے گا وہ باتیں دہرانے سے

گھر کا سناٹا تو حمیراؔ ہنگاموں کی نذر ہوا

دل کی ویرانی ویسی کی ویسی ایک زمانے سے

حمیرا رحمان

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(604) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Humaira Rahman, Jaise Koi Ziddi Bacha Kab Behle Behlane Se in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 10 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.7 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Humaira Rahman.