Mehak Se Jism Seek Ke Lahu Nichorti Hai Woh, Urdu Ghazal By Kashif Aura

Mehak Se Jism Seek Ke Lahu Nichorti Hai Woh is a famous Urdu Ghazal written by a famous poet, Kashif Aura. Mehak Se Jism Seek Ke Lahu Nichorti Hai Woh comes under the Love category of Urdu Ghazal. You can read Mehak Se Jism Seek Ke Lahu Nichorti Hai Woh on this page of UrduPoint.

مہک سے جسم سیک کے لہو نچوڑتی ہے وہ

کاشف اورا

مہک سے جسم سیک کے لہو نچوڑتی ہے وہ

عجب فقیر شخص ہو! قریب بیٹھتی ہے وہ

کسی کی عمر کھا گئیں، کسی کو خواب کر دیا

میں بس بتاتا رہ گیا کہ ایسے گھورتی ہے وہ

دکھائی دیں وہ پانیوں سے دُور مرتی مچھلیاں

یہ جان لو کہ چھوڑنے پہ ایسے چھوڑتی ہے وہ

بہت عجیب پھول ہے، چمک سے اضطراب ہے

میں پیار بولتا ہوں اور منہ بسورتی ہے وہ

مجھے خبر ہے جانِ من! میں موت کے سفر پہ ہوں

مجھے خبر ہے پھول لے کے تیر کھینچتی ہے وہ

میں شعر کہتا رہ گیا کہ شاید اِس پہ ہاں کہے

یہ بعد میں پتہ چلا کہ جیب دیکھتی ہے وہ

کاشف اورا

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1486) ووٹ وصول ہوئے

You can read Mehak Se Jism Seek Ke Lahu Nichorti Hai Woh written by Kashif Aura at UrduPoint. Mehak Se Jism Seek Ke Lahu Nichorti Hai Woh is one of the masterpieces written by Kashif Aura. You can also find the complete poetry collection of Kashif Aura by clicking on the button 'Read Complete Poetry Collection of Kashif Aura' above.

Mehak Se Jism Seek Ke Lahu Nichorti Hai Woh is a widely read Urdu Ghazal. If you like Mehak Se Jism Seek Ke Lahu Nichorti Hai Woh, you will also like to read other famous Urdu Ghazal.

You can also read Love Poetry, If you want to read more poems. We hope you will like the vast collection of poetry at UrduPoint; remember to share it with others.