Mujh Main Pinhaan Kissi Gulshan Ki Namodari Tak

مجھ میں پنہاں کسی گلشن کی نموداری تک

مجھ میں پنہاں کسی گلشن کی نموداری تک

آ ، قریں بیٹھ، مری روح کی سرشاری تک

مرے خوابوں پہ رہے تیرا تسلط دائم

میری آنکھوں میں رہا کر مری بیداری تک

چپکے چپکے جو سلگنے کی طلب بڑھنے لگی

لے کے آیا ہے جنوں عشق کی چنگاری تک

تُو مرے ساتھ رہے عقدہ کُشا کی صورت

مری آسانی سے لے کر مری دشواری تک

سرِ تسلیم ہے خم، پر ہے انا اپنی جگہ

دیکھنا بات نہ پہنچے مری خود داری تک

ہم نے بھی بات بنانے کا ہنر سیکھ لیا

تھی محبت، جو چلی آئی رواداری تک

تُو نے جو چال چلی ہے، وہ بہت خوب سہی

تھام کر بیٹھ ذرا دل کو، مری باری تک

کیسے کم ظرف کا احسان لیا ہے نسرین

سرگرانی مری، پہنچی ہے سبک ساری تک

نسرین سید

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(504) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Nasreen Syed, Mujh Main Pinhaan Kissi Gulshan Ki Namodari Tak in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 54 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Nasreen Syed.