بند کریں
شاعری اسحاق ظفر

میں تقدیر کا مارا ہوں

-

main taqdeer ka mara hoon


(247) ووٹ وصول ہوئے

: متعلقہ عنوان