بند کریں
شاعری اسحاق ظفر

سنو ایسا نہیں کرتے

-

suno aisa nahi karte


(270) ووٹ وصول ہوئے