بند کریں
شاعری ظفرترمذی

مستی ہے تکبر ہے شرارت ہے بلا ہے

-

masti hai takabur hai shararat hai bala hai


(161) ووٹ وصول ہوئے