Howa Bohat Hai Mataa Safar Sambhaal Ke Rakh

ہوا بہت ہے متاع سفر سنبھال کے رکھ

ہوا بہت ہے متاع سفر سنبھال کے رکھ

دریدہ چادر جاں ہے مگر سنبھال کے رکھ

پھر اس کے بعد تو قدریں انہیں پہ اٹھیں گی

کچھ اور روز یہ دیوار و در سنبھال کے رکھ

ابھی اڑان کے سو امتحان باقی ہیں

ان آندھیوں میں ذرا بال و پر سنبھال کے رکھ

یہ عہد کانپ رہا ہے زمیں کے اندر تک

تو اپنا ہاتھ بھی دیوار پر سنبھال کے رکھ

پڑھیں گے لوگ انہیں میں کہانیاں تیری

کچھ اور روز یہ دامان تر سنبھال کے رکھ

ہوا کے ایک ہی جھونکے کی دیر ہے قیصرؔ

کسی بھی طاق پہ شمع سحر سنبھال کے رکھ

قیصرالجعفری

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1314) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Qaiser Ul Jafri, Howa Bohat Hai Mataa Safar Sambhaal Ke Rakh in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 24 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Qaiser Ul Jafri.