Tehzeeb E No

تہذ یبِ نوء

تہذ یبِ نوء نے کر دیا تجھے اساس سے بیگا نہ

اسبابِ نمو تیرے بیگا نہ ، علم وہنر تیرا بیگا نہ

افسوں تھا عرشِ بر یں پر تیرے نعرہِ تکبیر کا

آج بے سُدھ و بے برگ و نوا بھی ہے تیرا ترانہ

تو کیا ہے تگ و تاز تیری شاہ ماتِ نفس ہے

کردار تیرے پر کھوں کے تھے اولٰی و یگانہ

دریُو زہ گری پیشہ تیرا شایاں نہیں تجھ کو

راہوار تھا طائر تھا محوِ پرواز بے با کانہ

غلطاں ہوں کہ تھا تو لشکرِ مُحمدی کا سپاہی

کیوں آئی تیری شمشیر میں ادائے کا فرانہ

تو صحرا نورد کوہ و دشت پیما تھا کبھی

تجھے سونے نہیں دیتی اب فکر دامِ آشیانہ

بقایا تیری حُر یت میں بسالت بھی نہیں

درد آشنا نہ بصیرت تیری نہ سیرت عاشقانہ

تیری صبح و شام فکرِ آشیا نہ کے سوا نہیں

گم ہو گئی تجھ سے تیری قبا ئے درویشانہ

نسخہءِ تام بھی تھا سالک بھی تھا تیرا دل

آج دنیا ئے دوں میں یہ دل فتنہ و ہنگا مہ

پردا ختہ تیرے آئین سے کیوں نہ ہو تی یہ دنیا

پیدا ہو جائے تجھ میں گر اوصافِ صحابانہ

اس سے پہلے کہ بڑ ھنے لگے یہ مرض گیتی

اے کیمیا گر بنا پھر سے وہی نسخہءِ بہدانہ

hibba taseer

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(390) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Poetry of Hibba Taseer, Tehzeeb E No in Urdu. Also there are 3 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Hibba Taseer.