بند کریں
شاعری فرحت عباس شاہزمین بھی نہ رہی رہگزار بھی نہ رہا

(261) ووٹ وصول ہوئے