بند کریں
شاعری فرحت زاہد

خندق میں بیٹھے ہو چُھپ کر

-

Khandaq me bethay ho chup kar


(27) ووٹ وصول ہوئے