بند کریں
شاعری مرزا محمد رفیع سودادیوان سوداوہ ہم نہیں جو کریں سیر بوستاں تنہا

(302) ووٹ وصول ہوئے