بند کریں
شاعری ساغر صدیقیدیوان ساغرنظر نظر بے قرار سی ہے نفس نفس میں شرار سا ہے

(578) ووٹ وصول ہوئے