بند کریں
شاعری ظفر اقبال

کوئی نفاست کئی نشانوں میں آ رہی تھی

-

koi nisafat kayi nishanoon main aa rahi thi


(359) ووٹ وصول ہوئے