Kufar Se Yeh Jo Munawar Meri Peshani Hai

کفر سے یہ جو منور مری پیشانی ہے

کفر سے یہ جو منور مری پیشانی ہے

ظاہر اس سے بھی مرا جذبۂ ایمانی ہے

یہ جو یکسوئی میسر ہے مجھے شام و سحر

سر بسر میرے لیے وجہ پریشانی ہے

اس کنارے پہ فقط میں ہوں اکیلا خالی

نہر کے دوسری جانب مری حیرانی ہے

خاک اڑتی ہے تو ہر سو مرے اندر ورنہ

جس طرف میں ہوں وہاں چاروں طرف پانی ہے

جو سیہ فام ہے اندر کی طرف سے جتنا

اس کے چہرے پہ یہاں اتنی ہی تابانی ہے

موسموں سے ابھی مایوس نہیں ہوں یکسر

اک ہوا ہے جو ابھی میری طرف آنی ہے

دل میں کیا صورت حالات ہے کھلتا نہیں کچھ

کیا کمی ہے یہاں کس شے کی فراوانی ہے

یہ عجب طرح کا بازار سخن ہے کہ جہاں

میں ہی نایاب ہوں اور میری ہی ارزانی ہے

آزمائش میں ہی رکھتا ہوں سدا خود کو ظفرؔ

میری مشکل ہی سراسر مری آسانی ہے

ظفر اقبال

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1611) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Zafar Iqbal, Kufar Se Yeh Jo Munawar Meri Peshani Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 105 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Zafar Iqbal.