Khuli Jab Aankh To Dekha Ke Duniya Sir Pay Rakhi Hai

کھلی جب آنکھ تو دیکھا کہ دنیا سر پہ رکھی ہے

کھلی جب آنکھ تو دیکھا کہ دنیا سر پہ رکھی ہے

خمار ہوش میں سمجھے تھے ہم ٹھوکر پہ رکھی ہے

تعارف کے تلے پہچان غائب ہو گئی اپنی

عجب جادو کی ٹوپی ہم نے اپنے سر پہ رکھی ہے

مرے ہونے کا یہ تصدیق نامہ کس نے لکھا ہے

گواہی کس کی میری ذات کے محضر پہ رکھی ہے

اچانک گر وہ بے آمد ہی کمرے میں بر آمد ہو

توجہ ہم نے تو مرکوز بام و در پہ رکھی ہے

عجب کولاژ ہے قسمت کا محرومی کا محنت کا

ستارے چھت پہ رکھے ہیں تھکن بستر پہ رکھی ہے

متاع حق عقیدہ ایک سجدے میں چرا لایا

خرد جویا تھی کس دہلیز پر کس در پہ رکھی ہے

نہیں قول و قرار جان و دل کافی نہ تھے اس کو

قسم اس شوخ نے آخر ہمارے سر پہ رکھی ہے

حساب نیک و بد جو بھی ہو ہم اتنا سمجھتے ہیں

بنائے حشر درد دل پہ چشم تر پہ رکھی ہے

عبد الاحد ساز

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(623) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Abdul Ahad Saaz, Khuli Jab Aankh To Dekha Ke Duniya Sir Pay Rakhi Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 117 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Abdul Ahad Saaz.