Naye Asloob Main Zinda Hue Hain

نئے اسلوب میں زندہ ہوئے ہیں

نئے اسلوب میں زندہ ہوئے ہیں

تبھی تو حرف آئندہ ہوئے ہیں

طلوع صبح کی امید کم تھی

دعائے شب سے تابندہ ہوئے ہیں

نہ کام آیا جہاں عرض ہنر بھی

لب اظہار شرمندہ ہوئے ہیں

بدن میں جیتے جی جو مر گئے تھے

وہ اپنی روح میں زندہ ہوئے ہیں

ہماری شعلگی سب سے جدا ہے

بجھے ہیں ہم تو سوزندہ ہوئے ہیں

مٹا سکتا نہیں جن کو زمانہ

کچھ ایسے نقش پایندہ ہوئے ہیں

ہمیں سود و زیاں سے کیا سخنؔ ہم

نہ یابندہ نہ گیرندہ ہوئے ہیں

عبدالوہاب سخن

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(330) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Abdul Wahab Sukhan, Naye Asloob Main Zinda Hue Hain in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 26 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 5 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Abdul Wahab Sukhan.