Insaan Hai Tu Kabar Se Kehta Hai Kiyon Ana

انسان ہے تو کبر سیں کہتا ہے کیوں انا

انسان ہے تو کبر سیں کہتا ہے کیوں انا

آدم تو ہم سنا ہے کہ وہ خاک سے بنا

کیسا ملا ہے ہم سیں کہ اب لگ ہے انمنا

سن کر ہماری بات کوں کرتا ہے ہاں نہ نا

مکھڑے کی نو بہار ہوئی خط سے آشکار

سبزہ نہ تھا یہ حسن کا بنجر تھا پر گھنا

مردا ہے بے وصال رہے گو کہ جاگتا

سوتا ہوں یار ساتھ سو زندوں میں جاگنا

دونی بیماری جب سیں بتاتے ہیں فاحشہ

مل مل کے جس قدر کہ گھناتے ہیں ابٹنا

یوں دل ہمارا عشق کی آتش میں خوش ہوا

بھن کر تمام آگ میں کھلتا ہے جوں چنا

نہیں آب و گل صفت ترے تن کے خمیر کی

کرتا ہوں جان و دل کوں لگا اس کی میں ثنا

جب آبروؔ کا بیاہ ہوا بکر فکر سیں

تب شاعروں نے نام رکھا اس کا بت بنا

نجم الدین شاہ مبارک

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(378) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Abroo Shah Mubarak, Insaan Hai Tu Kabar Se Kehta Hai Kiyon Ana in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 45 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 5 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Abroo Shah Mubarak.