Kabhi Wo Khush Bhi Raha Kabhi Khafa Hua Hai

کبھی وہ خوش بھی رہا ہے کبھی خفا ہوا ہے

کبھی وہ خوش بھی رہا ہے کبھی خفا ہوا ہے

کہ سارا مرحلہ طے مجھ سے برملا ہوا ہے

نشستیں پر ہیں چراغ و ایاغ روشن ہیں

بس ایک میرے نہ ہونے سے آج کیا ہوا ہے

اٹھا کے رکھ دو کتاب فراق کو دل میں

کہ یہ فسانہ ازل سے مرا سنا ہوا ہے

کبھی نہ خالی ملا بوئے ہم نفس سے دماغ

تمام باغ میں جیسے کوئی چھپا ہوا ہے

مری گرفت میں آتا نہیں ہے وہ پل بھر

مری نظر سے مرا دل ابھی بچا ہوا ہے

اسی کے اذن و رضا سے ہے سب نگہ داری

کہ دام و دانہ سبھی کچھ یہاں پڑا ہوا ہے

میں خواب میں بھی وہ دامن پکڑ نہیں سکتا

یہ ہاتھ اور کسی ہاتھ میں دیا ہوا ہے

یہی بہت ہے اگر ایک ہم سخن مل جائے

میں سن رہا ہوں مرا دل بھی تو دکھا ہوا ہے

میان وعدہ کوئی عذر اب کے مت لانا

کہ راہیں سہل ہیں اور زخم بھی کھلا ہوا ہے

وہ بے خبر ہے مری جست و خیز سے شاید

یہ کون ہے جو مقابل مرے کھڑا ہوا ہے

ابوالحسنات حقی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(923) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Abul Hasanat Haqqi, Kabhi Wo Khush Bhi Raha Kabhi Khafa Hua Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 22 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Abul Hasanat Haqqi.