Paida Hua Yeh Habab Kaisa, Urdu Ghazal By Abul Hasanat Haqqi

Paida Hua Yeh Habab Kaisa is a famous Urdu Ghazal written by a famous poet, Abul Hasanat Haqqi. Paida Hua Yeh Habab Kaisa comes under the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope category of Urdu Ghazal. You can read Paida Hua Yeh Habab Kaisa on this page of UrduPoint.

پیدا ہوا یہ حباب کیسا

ابوالحسنات حقی

پیدا ہوا یہ حباب کیسا

دریا میں ہے پیچ و تاب کیسا

اب فصل جنوں کہاں ہے باقی

پھر دیکھ رہا ہوں خواب کیسا

تھا دست ہنر میں موم سا جو

پتھرا گیا وہ شباب کیسا

سم سم کی صدا پہ کھل رہا تھا

تھا حلقۂ در سراب کیسا

ایک ایک ورق پڑھا ہوا سا

ہے نسخۂ انتخاب کیسا

پرتو سے ترے وجود میرا

آغوش میں لے حجاب کیسا

کیا جانے ہماری تلخ کامی

ہے ذائقۂ شراب کیسا

خوشبوئیں طواف کر رہی تھیں

تھا پچھلے پہر خطاب کیسا

قطرہ قطرہ چمک رہا ہے

روشن ہوا زیر آب کیسا

میں اپنے خلاف ہو گیا ہوں

نازل ہوا یہ عذاب کیسا

مدت سے ہے بند قفل ابجد

اے محتسبو حساب کیسا

سب موج ہوا میں رنگ اس کے

اے مومنو اجتناب کیسا

دیوار کا بوجھ بام پر ہے

یہ گھر بھی ہوا خراب کیسا

ابوالحسنات حقی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1741) ووٹ وصول ہوئے

You can read Paida Hua Yeh Habab Kaisa written by Abul Hasanat Haqqi at UrduPoint. Paida Hua Yeh Habab Kaisa is one of the masterpieces written by Abul Hasanat Haqqi. You can also find the complete poetry collection of Abul Hasanat Haqqi by clicking on the button 'Read Complete Poetry Collection of Abul Hasanat Haqqi' above.

Paida Hua Yeh Habab Kaisa is a widely read Urdu Ghazal. If you like Paida Hua Yeh Habab Kaisa, you will also like to read other famous Urdu Ghazal.

You can also read Love Poetry, If you want to read more poems. We hope you will like the vast collection of poetry at UrduPoint; remember to share it with others.