Pehlay Hum Ashk Thay Phir Deeda Num Naak Howay

پہلے ہم اشک تھے پھر دیدۂ نم ناک ہوئے

پہلے ہم اشک تھے پھر دیدۂ نم ناک ہوئے

اک جوئے آب رواں ہاتھ لگی پاک ہوئے

اور پھر سادہ دلی دل میں کہیں دفن ہوئی

اور پھر دیکھتے ہی دیکھتے چالاک ہوئے

اور پھر شام ہوئی، رنگ اڑے جام بنے

اور پھر ذکر چھڑا، تھوڑے سے غم ناک ہوئے

اور پھر آہ بھری اشک بہے، شعر کہے

اور پھر رقص کیا، دھول اڑی، خاک ہوئے

اور پھر ہم کسی پاپوش کا پیوند بنے

اور پھر اپنے بھی چرچے سر افلاک ہوئے

اور پھر یاد کیا اسم پڑھا، پھونک دیا

اور پھر کوہ گراں بھی خس و خاشاک ہوئے

احمد عطا

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1013) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ahmed Atta, Pehlay Hum Ashk Thay Phir Deeda Num Naak Howay in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 34 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.7 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ahmed Atta.