Kal Hum Ne Bazm Yaar Main Kya Kya Sharab Pi

کل ہم نے بزم یار میں کیا کیا شراب پی

کل ہم نے بزم یار میں کیا کیا شراب پی

صحرا کی تشنگی تھی سو دریا شراب پی

اپنوں نے تج دیا ہے تو غیروں میں جا کے بیٹھ

اے خانماں خراب نہ تنہا شراب پی

تو ہم سفر نہیں ہے تو کیا سیر گلستاں

تو ہم سبو نہیں ہے تو پھر کیا شراب پی

اے دل گرفتۂ غم جاناں سبو اٹھا

اے کشتۂ جفائے زمانہ شراب پی

اک مہرباں بزرگ نے یہ مشورہ دیا

دکھ کا کوئی علاج نہیں جا شراب پی

بادل گرج رہا تھا ادھر محتسب ادھر

پھر جب تلک یہ عقدہ نہ سلجھا شراب پی

اے تو کہ تیرے در پہ ہیں رندوں کے جمگھٹے

اک روز اس فقیر کے گھر آ شراب پی

دو جام ان کے نام بھی اے پیر میکدہ

جن رفتگاں کے ساتھ ہمیشہ شراب پی

کل ہم سے اپنا یار خفا ہو گیا فرازؔ

شاید کہ ہم نے حد سے زیادہ شراب پی

احمد فراز

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(3882) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ahmed Faraz, Kal Hum Ne Bazm Yaar Main Kya Kya Sharab Pi in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 154 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ahmed Faraz.