Phir Wohi Shaab K Saraboon Ka Chalan

پھر وہی شب کے سرابوں کا چلن!

پھر وہی خواب نما

شب کے سرابوں کا چلن جاری ہے

شب کہ اس بار صفیران چمن

اور بھی کچھ بھاری ہے

گل پہ شبنم پہ عنادل پہ

صبا اور ہوا سب پہ

وہی سحر الم طاری ہے

پھر اسی طرز کہن

میں نیا انداز فسوں کاری ہے

سخت مشکل میں ہیں

اے جان وفا ارض وطن

حرف مقصود رقیبوں کو گوارہ بھی نہیں

کیا کریں صبر کا یارا بھی نہیں

کیسے تعمیر کی تزئین کی پھر بات کریں

خون دل نذر گرانبارئ اوقات کریں

ہم تہی دست جو آہوں میں اثر مانگتے ہیں

سبز و شاداب حسیں خلد نظر مانگتے ہیں

اپنی مجبور تمنا کا نگر مانگتے ہیں

ایک بے داغ سحر مانگتے ہیں!!

اختر ضیائی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1480) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Akhtar Ziai, Phir Wohi Shaab K Saraboon Ka Chalan in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Birthday, Hope Urdu Poetry. Also there are 22 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Birthday, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Akhtar Ziai.