Woh Jiyain Kya Jinhain Jenay Ka Hunar Bhi Nah Mila

وہ جئیں کیا جنہیں جینے کا ہنر بھی نہ ملا

وہ جئیں کیا جنہیں جینے کا ہنر بھی نہ ملا

دشت میں خاک اڑاتے رہے گھر بھی نہ ملا

خس و خاشاک سے نسبت تھی تو ہونا تھا یہی

ڈھونڈنے نکلے تھے شعلے کو شرر بھی نہ ملا

نہ پرانوں سے نبھی اور نہ نئے ساتھ چلے

دل ادھر بھی نہ ملا اور ادھر بھی نہ ملا

دھوپ سی دھوپ میں اک عمر کٹی ہے اپنی

دشت ایسا کہ جہاں کوئی شجر بھی نہ ملا

کوئی دونوں میں کہیں ربط نہاں ہے شاید

بت کدہ چھوٹا تو اللہ کا گھر بھی نہ ملا

ہاتھ اٹھے تھے قدم پھر بھی بڑھایا نہ گیا

کیا تعجب جو دعاؤں میں اثر بھی نہ ملا

بزم کی بزم ہوئی رات کے جادو کا شکار

کوئی دلدادۂ افسون سحر بھی نہ ملا

آل احمد سرور

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(365) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ale Ahmad Suroor, Woh Jiyain Kya Jinhain Jenay Ka Hunar Bhi Nah Mila in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 61 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ale Ahmad Suroor.