Main Huju Ik Apne Har Qaseedey Ki Rad Main Tehreer Kar Raha HooN

میں ہجو اک اپنے ہر قصیدے کی رد میں تحریر کر رہا ہوں

میں ہجو اک اپنے ہر قصیدے کی رد میں تحریر کر رہا ہوں

کہ آپ اپنے سے ہوں مخاطب خود اپنی تحقیر کر رہا ہوں

کہاں ہے فرصت نشاط و غم کی کہ خود کو تسخیر کر رہا ہوں

لہو میں گرداب ڈالتا ہوں نفس کو شمشیر کر رہا ہوں

مری کہانی رقم ہوئی ہے ہوا کے اوراق منتشر پر

میں خاک کے رنگ غیر فانی کو اپنی تصویر کر رہا ہوں

میں سنگ و خشت انا کی بارش میں کب کا مسمار ہو چکا ہوں

اب انکساری کی نرم مٹی سے اپنی تعمیر کر رہا ہوں

یہ عشق کی ہے فسوں طرازی کہ وحشتوں کی کرشمہ سازی

کمند خوشبو پہ ڈالتا ہوں ہوا کو زنجیر کر رہا ہوں

شناوری کے اصول مجھ کو بتائے گا کوئی کیا کہ میں نے

کیا ہے موجوں کا خیر مقدم بھنور کی توقیر کر رہا ہوں

تم اپنے دریاؤں پر بٹھاؤ ہزار پہرے مگر مجھے کیا

میں سارے خوابوں کو سب سرابوں کو اپنی جاگیر کر رہا ہوں

اسلم محمود

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(417) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Aslam Mahmood, Main Huju Ik Apne Har Qaseedey Ki Rad Main Tehreer Kar Raha HooN in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 21 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Aslam Mahmood.