Nah Koi Din Nah Koi Raat Intezar Ki Hai

نہ کوئی دن نہ کوئی رات انتظار کی ہے

نہ کوئی دن نہ کوئی رات انتظار کی ہے

کہ یہ جدائی بھروسے کی اعتبار کی ہے

جو خاک اڑی ہے مرے دکھ سمیٹ لیں گے اسے

جو بچھ گئی سر منظر وہ رہ گزار کی ہے

وہ وصل ہو کہ کھلے آئنے پہ عکس جمال

یہ آرزو ہے مگر بات اختیار کی ہے

اسی کا نام ہے وحشت سرائے جاں میں چراغ

اسی کے لمس میں دھڑکن دل فگار کی ہے

یہ کون تھا جو سر بام خود کو بھول گیا

یہ کس کا رقص تھا، گردش یہ کس غبار کی ہے

یہ کون مجھ میں ہرے موسموں اترتا ہے

یہ کیسے رنگ ہیں خوشبو یہ کس دیار کی ہے

بجھانے والے نے خاورؔ بجھا دیا ہے چراغ

یہی ٹھہرنے کی ساعت یہی مزار کی ہے

ایوب خاور

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(469) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ayub Khawar, Nah Koi Din Nah Koi Raat Intezar Ki Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 28 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ayub Khawar.