Es Marg Ko Kab NahiN MaiN Samjha

اس مرگ کو کب نہیں میں سمجھا

اس مرگ کو کب نہیں میں سمجھا

ہر دم دم واپسیں میں سمجھا

انداز ترا بس اب نہ کر شور

اے نالۂ آتشیں میں سمجھا

تب مجھ کو اجل ہوئی گوارا

جب زہر کو انگبیں میں سمجھا

اک خلق کی سر نوشت بانچی

اپنا نہ خط جبیں میں سمجھا

جوں شانہ کبھو تہہ پینچ تیرے

اے کاکل عنبریں میں سمجھا

کیا فائدہ آہ دم بہ دم سے

ہے درد دل حزیں میں سمجھا

پھر اس میں نہ شک نے راہ پائی

جس بات کو بالیقیں میں سمجھا

جب اٹھ گئی ضد تو ہر سخن میں

سمجھا تو کہیں کہیں میں سمجھا

موئے کمر اس کا کیا ہے اے عقل

سمجھا تو مجھے نہیں میں سمجھا

لکھی غزل اس میں مصحفیؔ جلد

جس کو کہ نئی زمیں میں سمجھا

غلام ہمدانی مصحفی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(558) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ghulam Hamdani Mushafi, Es Marg Ko Kab NahiN MaiN Samjha in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 51 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ghulam Hamdani Mushafi.